Chak Peeran Ka Jassa / چک پیراں کا جسا By Balwant Singh

    یہ ناول ایک مخصوص عہد اور نسل کا نمائندہ ہے۔ آپ اگر کسی گاؤں سے وابستہ نہیں ہیں تو یہ ویسے ہی آپکو بور کرنے کے علاوہ کچھ نہیں کر سکتا۔ ہمارے ہاں اچھے نئے لکھنے والوں کی شدید کمی ہے۔ قحط الرجال کا عالم ہے، ایسے میں ناشرین اس قسم کی رائلٹی فری کتب شائع کرتے ہیں۔ بک گئی تو کیا کہنا اور ناپسند کی گئی تو کم از کم لکھنے والے کو معاوضہ تو نہیں دینا پڑے گا۔ Urdu شاندار ناول Urdu

    Balwant Singh ´ 1 REVIEW

    وجود ��ن سے ہے تصویر کائنات میں رنگ

    شہر کی لڑکی جب پنجاب کے گاؤں آتی ہے تو زندگی کی جھیل میں جو لہریں پیدا ہوتی ہیں، یہی بیان اس ناول میں ہے۔ اور شہر کی لڑکی سے پیدا ہونے والا ڈرامہ قابل مطالعہ ہے۔
    ہر باب کا آغاز وارث شاہ کی شاعری کے اقتباس سے ہوتا ہے۔ بک کارنر، جہلم نے اسے بہترین انداز سے شائع کیا ہے۔ اسکی قیمت نو سو روپے ہے۔

    از Faisal Majeed Urdu وارث شاہ اس عشق دے ونج وچوں
    کسے پلے نہیں بدھڑی دمڑی ہے
    In these transactions of love o
    Waris Shah
    No one has ever gained the meanest gain

    رانجھا آکھدا ایہہ جہان سُفنا۔۔۔
    Ranjha says this world is but a dream

    Ever so poignantly every chapter of this novel starts with a couplet from Waris Shah - the transience of this world; the overwhelming impact of infatuation; empathy for the needy; the playfulness of the young and the carefree; the obsessiveness of romantic love; the ultimate profitlessness of romantic love; the plight of the neglectful; the failure of those who aspire to things out of their league; the tribulations of love and the pain of being apart from the beloved; the intrigues of women; the hauteur of pampered fools; the regret that comes with making tall claims; and the granting of honor or infamy vesting with the Divine - and Balwant Singh tightly weaves his story linking them to the sublime verse from Heer Waris Shah. It contrasts ever so beautifully with Balwant Singh's otherwise straightforward prose, which nevertheless has lovely descriptive passages of the Punjab countryside and essentially tells stories of passions; whether passionate rivalry or passionate love.

    Ultimately Chak Peeran Ka Jassa is a novel driven by incredibly strong characters whom Balwant Singh draws in such great detail and texture. The protagonist is the orphan boy Jassa Singh of course who is reluctantly taken under his care by his uncle Bagga Singh. Jassa is stoic, enigmatic and taciturn, capable of roughing it out, taking daily beatings, and self-preserving, without as much as a change of expression. His is a fascinating character and it is engrossing to see him grow and develop from a grubby, often maltreated loner into a brooding, very strong and somewhat surly young man who is nevertheless capable of tender emotions and harbors a deep affection for his childhood playmate Deepi. Bagga Singh on the other hand is a dull, rough hewn, bully of a man who falls for an enigmatic siren called Ram Pyari who comes to live in the village. The thing about Balwant Singh's storytelling is that he completely engrosses the reader and the story flows marvelously. The Punjabi village economy, Sikh culture, aspects of everyday early twentieth century rural life under distant colonial rule, the festivals, the topography and the seasons, and above all local norms and rivalries (especially with shareekas or male paternal cousins) is captured minutely. his dialogue is crisp, spontaneous and often quite witty, with Punjabi expressions, adages, and at times expletives making it sound very natural. The other characters in the novel are no less memorable - Bagga Singh's arch nemesis the wily Channan Singh and his thuggish sons; Bagga's long-suffering and doting elder sister Bhajnu; the bhang consuming, slovenly, mischievous and ever so lively elder Jageer Singh; the no-gooder Tasveer Singh; the noble and cunning village tough turned householder Sher Singh; the elegant and chivalrous policeman Pooran Singh; the vivacious Parasni, and the charming Deepi, amongst others, enliven the story and add much to its heft, entertainment and believability.

    In a culture that extols physical strength and courage, village dynamics are very much determined by the balance of power between different strongmen and their groups of loyalists. However, as it emerges what is even more important are intrigue, tactics and the ability to outsmart one's opponents. Bagga Singh learns this the hard way and at great personal cost but Jassa hides a shrewder persona beneath his impassive and even dull exterior. The novel moves at a steady pace as the combatants harbor grievances, seek strategic alliances and public support, and try and outmaneuver each other. In a slow-paced period at a slow-paced place it is remarkable how Balwant Singh builds the tension and sense of anticipation and explores aspects of human social existence, group and clan behavior, and power dynamics that are universal. The climax when it comes through the provocations of Channan Singh's bulky and roguish nephew Thunna, is brutal and devastating in terms of the resulting outcome and the future power politics in the area.

    A highly entertaining read this is a wonderful novel that chronicles a way of life without either romanticizing it too much or being didactic. One could argue that towards the end one too many coincidences and neat and pleasant tidying up of things take place. Nevertheless, this is highly compelling storytelling. The dialogue and character-building is rich and impactful and in Jassa we have a unique and strangely likable character in Urdu literature. The novel has been very nicely reprinted by Book Corner. Urdu یہ ناول جناب حامد سراج مرحوم کی خصوصی تاکید پر پڑھنے کا ارادہ باندھا تھا. یہ ناول ان ہی کی کاوش سے دوبارہ چھپا تھا. ان کا خیال تھا کہ اگر اس کو از سرنو نہ چھپوایا گیا تو نئی نسل ایک بہت بڑے ناول سے محروم ہوجائے گی. اس کی تین کاپیاں انھوں نے راقم بشمول دو ساتھیوں کے لیے منگوائی تھیں جب ہم ان کی قدم بوسی کے لیے ان کے دولت خانہ پر حاضر ہوئے۔
    میرے ایک اور دوست اسد چشتی از پاکپتن بھی بلونت سنگھ کے بہت بڑے مداح ہیں. کسی حد تک ان کی پسندیدگی کہ وجہ اس ناول کے مطالعہ کے بعد سمجھ آتی ہے. بلونت سنگھ پنجاب کی سرزمین کے رومانس اور کلچر کو گہرائی سے کشید کرکے صفحہِ قرطاس پر بکھیرتے ہیں. پنجاب دھرتی کی خوبصورتی کے ساتھ ساتھ پنجابی زندگی میں موجود گھمبیرتا کا بیان بھی لازمی سمجھتے ہیں۔
    یہ ناول ایک یتیم نوجوان جسّا سنگھ کی مظلوم زندگی کے گرد گھومتا ہے. جسّا یتیم ہوکر اپنے سگے چچا سردار بگا سن��ھ کے در پر آتا ہے. وقت کے ساتھ ساتھ وہ جھڑکیاں، گالیاں اور تشدد سہنے کے بعد پنجابی دھاکڑ بنتا ہے کہ اس کا چچا بھی اس سے خوف کھانے لگتا ہے. اس ناول میں پنجابی زندگی کو بہت خوبصورت انداز میں بیان کیا گیا ہے. ناول کے کردار اپنی مونچھوں کو تاؤ دے کر، ان میں گھی لگا کر گھومتے ہیں. جو شخص اپنی طاقت ثابت کردے، اس کا احترام بھی کیا جاتا ہے. پنجابی زندگی کے باقی پہلوؤں کی طرح رشتہ داروں کی سازشیں بھی ساتھ ساتھ موجود رہتی ہیں۔
    دوستی، محبت، سازشوں، بہادری اور دیہاتی دانائی کی کہانیوں سے بھرا یہ ناول آپ کو ایک لمحے کے لیے بھی اکتانے نہیں دے گا۔

    Urdu بلونت سنگھ سے میرا تعارف ان کے ناول رات چور اور چاند کے توسط سے ہوا۔ سادہ مگر سحر انگیز تحریر۔ کہانی ایسی کہ بس پڑھتے جائیں اور آخر تک کتاب نہ رکھ پائیں۔ اب ان کا دوسرا ناول چک پیراں کا جسا پڑھا۔
    ناول کی روح کو سمجھنے کے لئے آپ کو ناول کا کردار بننا پڑتا ہے۔ جب آپ کہانی کا کردار بن جاتے ہیں تو کہانی زندگی بن کر آپ میں سانس لیتی ہے۔ایک بار آپ تحریر کے ماحول میں پہنچ جائیں تو بلونت سنگھ آپ کی انگلی پکڑ کر ہر منظر کی سیر کرواتا ہے۔
    رہی بات کہانی کی تو کہانی ایسی دلچسپ کہ آخری صفحہ تک تجسس قائم رہے۔ محض ایک کہانی ہے جو اپنے اندر ان گنت گہرائیوں کو سمیٹے ہوئے ہے۔بلونت سنگھ ایک ماہر پینٹر ہے۔ گاوں کے ماحول، چوپال کی بیٹھک ،شریک داری، دیہاتی رہن سہن کو وہ اپنے کینوس پر پینٹ کرتا ہے۔
    ۔
    ۔
    ۔
    ایک دن ہم نہیں ہونگے۔۔۔۔۔۔بلونت سنگھ ہوگا۔۔۔۔چک پیراں کا جسا زندہ رہے گا۔ (محمد حامد سراج ) Urdu چک پیراں کا جسا پنجاب اور پنجاب کی روایتی رہتل کا بہترین ترجمان ناول ہے۔ کرداروں کی بنت سے لے کر سماجی ساخت کے ہر پہلو میں پنجاب نظر آتا ہے۔ یہ ناول پنجابی شناخت کو اس انداز میں پیش کرتا ہے کہ پڑھنے والا خؤد کو کہانی کے کرداروں میں جیتا جاگتا محسوس کرتا ہے۔ کہانی کے بیان پر غور کریں تو ہمیں اندازہ ہو گا کہ مصنف کے انداز و بیان سے منظر فلم کی طرح آںکھوں کے سامنے گھومتا ہے۔ جسے کا اپنے چاچے بگا سنگھ کی بات میں 'اچھا چاچا' کہنا بھی مختلف صورتحال میں بھی مختلف معانی دیتا ہے، ناول کی کہانی بڑی سیدھی سیدھی ہے لیکن بڑے خوبصورت انداز میں بہت سی پس پردہ حقیقتوں کو آشکار کرتی ہے۔ Urdu

    Chak Peeran Ka Jassa / چک پیراں کا جسا

    Chak