Meray Dil Meray Musafir By Faiz Ahmad Faiz

    free download à eBook, PDF or Kindle ePUB ë Faiz Ahmad Faiz

    اس کتاب میں وہ نظم ہے، جس کی وجہ سے میں نے فیض صاحب کو پڑھنا اور سمجھنا شروع کیا۔ فیض صاحب کی شاعری سمجھنے کے لئے فیض صاحب کو بھی سمجھنا انتہائی ضروری ہے۔
    مرے دل مرے مسافر
    ہوا پھر سے حکم صادر
    کہ وطن بدر ہوں ہم تم
    دیں گلی گلی صدائیں
    کریں رُخ نگر نگر کا
    کہ سُراغ کوئی پائیں
    کسی یارِ نامہ بر کا
    ہر اک اجنبی سے پوچھیں
    جو پتا تھا اپنے گھر کا
    سرِ کوئے ناشنائیاں
    ہمیں دن سے رات کرنا
    کبھی اِس سے بات کرنا
    کبھی اس سے بات کرنا
    تمہیں کیا کہوں کہ کیا ہے
    شبِ غم بُری بلا ہے
    ہمیں یہ بھی تھا غنیمت
    جو کوئی شمار ہوتا
    ہمیں کیا بُرا تھا مرنا
    اگر ایک بار ہوتا Meray Dil Meray Musafir A bit difficult to understand but surely a good read from a poet that so effortlessly characterises an era of turbulence. Meray Dil Meray Musafir There are some poignant verses,but it is a brief collection.Among my favourite lines :
    Humain kya bura tha marna
    Agar aik baar hota Meray Dil Meray Musafir زہر سے دھو لیے ہیں ہونٹ اپنے
    لطفِ ساقی نے جب کمی کی   ہے
    بس وہی سرخ رو ہوا جس   نے
    بحرِ خوں  میں  شناوری   کی  ہے Meray Dil Meray Musafir

    Meray

    Meray Dil Meray Musafir